نگاہوں سے قتل کر ڈالو نہ تکلیف ہو دونوکو| Love Poem

عیادت کو وہ میری آ کر——وہ یہ تاکید کرتے ہیں
تمہیں تو ہم ہی ماریں گےذرا سا ٹھیک ہوجاؤ۔۔۔

نگاہوں سے قتل کر ڈالو ،نہ ہو تکلیف دونوں کو
تمہیں خنجر اٹھانے کی، ہمیں گردن جھکانے کی

*شوق نہیں ھے مجھے سرِ عام اپنے جذبات لکھنے کا…*
*مگر کیا کروں اب ذریعہ یہی ھے تجھ سے بات کرنے کا*
اس کی مہندی لگانے کا کچھ تو فائدہ ہوا ہمیں..
ساری رات اس کے چہرے سے ذلفیں ہٹا تے رہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: